پہلا “سوشل سرچ نیٹ ورک” وولونیا اب سب کے لیے دستیاب

پادوا، اطالیہ، 14 جون/پی آرنیوزوائر–

14 جون کو شروع ہونے والا اطالوی منصوبہ تمام انٹرنیٹ صارفین کے لیے 12 زبانوں میں نئی خصوصیات کے ساتھ دستیاب ہوگا

وولونیا نے اپنا بیٹا مرحلہ مکمل کر لیا ہے اور اب تمام انٹرنیٹ صارفین کے لیے کھلا ہے۔ پلیٹ فارم کے فنکشنز کو بہتر بنانے کے لیے مہینوں کی محنت شاقہ کے بعد 14 جون کو شروع ہونے والا “سوشل سرچ نیٹ ورک” اطالیہ میں ڈیزائن اور تیار کیا گیا ہے اور بالآخر تمام انٹرنیٹ صارفین کے لیے دستیاب ہے جو ویب پر نیا تجربہ اٹھانا چاہتے ہیں۔

وولونیا دراصل پہلا “سماجی سرچ-بیسڈ نیٹ ورک” ہے جو صارفین کو یکساں جذبات اور دلچسپی رکھنے والے افراد کے ساتھ تعلق کی سہولت دیتا ہے۔

وولونیا کی مدد سے ایک سادہ معلومات تلاش اس موضوع میں دلچسپی اور جذبات رکھنے والے حقیقی لوگوں سے مل کر “سوشل” بن جاتی ہے، یہ براؤزنگ کو ایک زیادہ پرلطف اور بامعنی تجربے میں ڈھالتی ہے۔ آپ اپنے نئے سفری ساتھیوں کے ساتھ کسی بھی ویب صفحے پر رابطہ کر سکتے ہیں اور ثقافتی میلان کی بنیاد پر دوستوں کے نیٹ ورکس بنا سکتے ہیں۔

وولونیا  http://www.volunia.com پر 12 مقامی زبانوں میں دستیاب ہے۔ 21 جون سے یہ تمام موبائل پلیٹ فارمز پر بھی دستیاب ہوگا۔

وولونیا ہی  کیوں؟

انٹرنیٹ پر تمام معلومات تک رسائی حاصل نہیں کی جا سکتی۔ سب سے اہم معلومات لوگوں کی یادداشت، ذہن اور دلوں میں رہتی ہے۔ وولونیا کے ساتھ ہر ویب صفحہ نئی چیزوں کو سیکھنے اور نئے لوگوں سے ملنے کے لیے گفتگو اور خیالات پیش کرنے کے لیے ایک مقام بن جاتا ہے۔ منصوبے کے خیال کو آگے بڑھانے کا بنیادی مقصد: لوگوں کو تمام تک ٹیکنالوجی اور ثقافتی رکاوٹوں سے آگے دیگر افراد سے رابطے میں رکھنا ہے۔

وولونیا مواد کو نہیں چھیڑتا

یہ سمجھنا ، خصوصاً ناشرین کے لیے، دلچسپ ہوگا کہ وولونیا مواد کو کس طرح منظم کرتا ہے۔ اپنے فنکشنز کی مدد سے کسی مواد پر تبصرے کے لیے آپ کو اسے صفحے سے لینے اور اپنے رابطوں کے ساتھ ایک بند سوشل نیٹ ورک میں شیئر کرنے کی ضرورت نہیں۔ وولونیا مواد کو ویسا ہی رکھتا ہے جیسا کہ وہ تخلیق کیا گیا، لیکن آپ اس پر دیگر لوگوں کے ساتھ گفتگو کر سکتے ہیں جو اس وقت اس مواد کو وزٹ کر رہے ہوں گے (یہ وڈیو بھی ہو سکتی ہے، تصویر یا خبر بھی) یا آپ دیکھے گئے صفحے کے حوالے سے کوئی پیغام چھوڑ سکتے ہیں تاکہ مستقبل میں اس مواد پر آنے والا کوئی فرد اس کو دیکھ سکے۔

ذریعہ: وولونیا اطالیہ

Leave a Reply