گریلی اور ہینسن لاطینی امریکہ کے لیے وزارت تجارت کے تجارتی وفد میں شامل ہوں گے

– شکاگو میں مقیم سی او او جان سی روبک 12 سے 18 مئی تک کے دورے میں خطے میں مقامی اقتصادی تعلقات بنانے میں مدد دیں گے

شکاگو، 2 مئی 2013ء/پی آرنیوزوائر/–

شکاگو میں قائم شہری و ماحولیاتی انجینئرنگ اور تعمیراتی ادارے گریلی اینڈ ہینسن کے ایگزیکٹو نائب صدر اور چیف آپریٹنگ آفیسر جان سی روبک 12 سے 18 مئی 2013ء تک نائب امریکی وزیر تجارت ڈاکٹر ریبیکا بلانک کے ساتھ بنیادی ڈھانچے کی کاروباری ترقی کے تجارتی مشن پر برازیل، کولمبیا اور پاناما جائیں گے۔

(لوگو: http://photos.prnewswire.com/prnh/20130502/CG06683LOGO)

Greeley%20and%20Hansen%20Logo گریلی اور ہینسن لاطینی امریکہ کے لیے وزارت تجارت کے تجارتی وفد میں شامل ہوں گے

Logo

روبک نے کہا کہ “لاطینی امریکہ کی یہ ابھرتی ہوئی معیشتیں گریلی اینڈ ہینسن کے لیے ایک شاندار موقع کی نمائندہ ہیں۔ مجھے ان اہم مذاکرات میں گریلی اینڈ ہینسن اور مقامی کاروباری برادری کی نمائندگی کرنے پر فخر محسوس ہوگا اور میں پرامید ہوں کہ یہ مذاکرات کلیدی بنیادی ڈھانچے کے فیصلہ سازوں کے ساتھ تعلقات کا نقطہ آغاز ثابت ہوں گے۔”

ان ممالک کی حکومتوں نے آنے والے سالوں میں بنیادی ڈھانچے کی تعمیر کے پرعزم منصوبوں کی خاکہ بندی کی ہے، جن میں سڑکوں، پلوں اور پانی کی صفائی کی تنصیبات کے منصوبے شامل ہیں۔ بلانک نے کہا کہ “یہ تجارتی مشن امریکی کمپنیوں کے لیے بنیادی ڈھانچے کے کاروباری مواقع پیش کرنے میں مدد دے گا جو برازیل، کولمبیا اور پاناما کی جانب دیکھ رہی ہیں۔ یہ تمام ممالک بنیادی ڈھانچے کی تعمیر میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کر رہے ہیں، اور اس تجارتی دورے میں ہم جو کام کریں گے وہ یہ ہوگا کہ گریلی اینڈ ہینسن جیسے اداروں کو برازیل، کولمبیا اور پاناما میں مدد دینا، امریکی برآمدات کو فروغ دینا اور یہاں گھر پر آسامیاں تخلیق کرنا ہے۔”

اس تجارتی وفد میں امریکہ کی 19 دیگر کمپنیوں کے کاروباری رہنما شامل ہوں گے۔ یہ گزشتہ ایک سال میں تیسرا موقع ہوگا کہ روبک  امریکی برآمدات کو بیرون ملک فروغ دینے کے لیے وزارت تجارت کے ساتھ ہوں گے۔ روبک اس سے پہلے جنوبی افریقہ، زمبیا اور مصر میں حکومتی عہدیداران اور کاروباری رہنماؤں کے ساتھ اعلیٰ سطحی کامیاب مذاکرات میں شرکت کر چکے ہیں، جو امریکی مصنوعات اور خدمات اور گریلی اینڈ ہینسن کے لیےممکنہ طور پر تین دیگر مارکیٹیں ہو سکتی ہیں۔

روبک نے کہا کہ “یہ تجارتی وفد ہمارے لیے دلچسپ ہے، کیونکہ گریلی اینڈ ہینسن لاطینی امریکہ کی مارکیٹوں میں اپنے قدم جمانے کی خواہاں ہے۔ گریلی اینڈ ہینسن خطے میں وسیع تجربہ رکھتی ہے، اور ہماری تقریباً 100 سالہ تاریخ کے دوران ان ممالک میں آبی بنیادی ڈھانچے کے منصوبے مکلم کر چکی ہے۔”

شکاگو میں 1914ء میں قائم ہونے والا گریلی اینڈ ہینسن پانی، آبی طاس اور متعلقہ بنیادی ڈھانچوں کے لیے جدید انجینئرنگ حل بنانے میں اور صحت عامہ، حفاظت اور بہبود کو بہتر بنانے کے لیے بنیادی ڈھانچے کے متعلقہ چیلنجز میں بھی بین الاقوامی رہنما ادارہ ہے۔ گریلی اینڈ ہینسن منصوبے کے تمام مراحل کے لیے خدمات فراہم کرتا ہے اور تعمیراتی اور یوٹیلٹی مینجمنٹ کے حوالے سے مشاورتی خدمات دیتا ہے۔

 

Leave a Reply