نئی درجہ بندی میں طلبہ کے لیے دنیا کے بہترین شہروں کا انکشاف

لندن، 14 فروری 2012ء/پی آرنیوزوائر/–

سرفہرست 10 میں غلبے کے ساتھ یورپ مالیاتی کشمکش سے بے پروا

طلبہ کے لیے دنیا کے بہترین شہروں کی نئی درجہ بندی میں یورپ نے امریکہ کو پچھاڑ دیا ہے، جسے سالانہ کیو ایس ورلڈ یونیورسٹی رینکنگز (ر) کے پس پردہ تحقیقی ماہرین کی جانب سے آج پہلی بار جاری کیا گیا ہے۔

لندن، بوسٹن اور ملبورن پر برتری کے ساتھ پیرس فہرست ہے، جبکہ دس میں سے چھ یورپی شہر ہیں۔ سنگاپور (12 واں) سب سے نمایاں ترین ایشیائی شہر ہے جو ہانگ کانگ (19=) اور ٹوکیو (19=) سے آگے ہے، جبکہ آسٹریلیا واحد ملک ہے جس کے سرفہرست دس میں دو شہر ہیں۔

12 معیارات کی بنیاد پر، کیو ایس بیسڈ اسٹوڈٹس سٹیز 2012ء بین الاقوامی درجہ بندی کی جامعات کے معیار اور تعداد، اور ساتھ ساتھ مقدونیت، معیار رہائش اور آجرین میں مقامی جامعات کی ساکھ کو گردانتی ہے۔

یورپ نے معیار رہائش و مقدوریت میں کامیابیاں سمیٹیں، جس میں سرفہرست-دس شہروں پیرس، ویانا، زیورخ اور برلن میں تعلیمی فیس ایک ہزار امریکی ڈالرز سالانہ سے کم ہے، جو امریکہ میں 30 ہزالرز سالانہ ہے۔ شمالی امریکہ اور ایشیا کے نو، نو اور لاطینی امریکہ کے چار شہروں کے مقابلے میں یورپ کے بیس شہروں نے سرفہرست 50 میں جگہ پائی ہے۔

اپنی معروف جامعات کے معیار میں لندن سے سب سے زیادہ اسکور حاصل کیا ہے، لیکن پیرس بہتر مجموعی اسکور کے ساتھ بین الاقوامی درجے کے اداروں کی زیادہ تعداد کے حامل ہے۔

کیو ایس بیسٹ اسٹوڈنٹ سٹیز 2012ء

[http://www.topuniversities.com/student-life/best-student-cities/2012 ]

درجہ         شہر

1     پیرس

2     لندن

3     بوسٹن

4     ملبورن

5     ویانا

6     سڈنی

7     زیورخ

8=  برلن

8 = ڈبلن

10  مونٹریال

کیو ایس کویک کویریلی سائمنڈز http://www.topuniversities.com

50 سرفہرست: http://www.topuniversities.com/student-life/best-student-cities/2012

ایڈورڈ ہسن، پیرس کی جامعات کے وائس چانسلر : “یہ تحقیق پیرس کے فراہم کردہ عالمی معیار کے تعلیمی تجربے کو تسلیم کرتا ہے۔ ہمارے پاس، کم تعلیمی فیس کے ساتھ ساتھ، کسی بھی دوسرے شہر کے مقابلہ میں زیادہ بہتر درجے کی جامعات ہیں۔ آئیڈیکس مقابلے کے نتائج کے طور پر پیرس چار “جامعات فضیلت” کا حامل ہے۔”

لندن کے میئر بورس جانسن: “میں زمین پر طلبہ کے لیے بہترین مقامات سے ایک کی حیثیت سے لندن کی تصدیق پر جان کر خوش ہوا۔4 لاکھ سے زائد طلبہ اور کسی بھی دارالحکومت کے مقابلے میں زیادہ سرفہرست جامعات کا حامل لندن طالب علموں کے لیے ایک عظیم شہر ہے۔ اب جبکہ اولمپک کھیل بہت قریب ہیں، لندن تبدیلی کے ایک عظیم عمل سے گزر رہا ہے۔ مزید برآں، ہمارے پاس نیو یارک کے مقابلے میں دو گنی سے زائد کتب کی دکانیں اور پیرس سے زیادہ عجائب گھر ہیں۔ اور ویسے، ہمارے عجائب گھر مفت ہیں۔”

کیو ایس مینیجنگ ڈائریکٹر نونزیو کویک کویریلی : “جامعات میں جانا اعلیٰ ترین ادارے کے انتحاب سے کہیں آگے بڑھ کچھ ہے۔ وسیع تر عوامل پر غور کرنے کے نتیجے میں بر اعظم یورپ، آسٹریلیا اور ایشیا کے شہر طلبہ کے لیے جداگانہ و ممتاز فوائد رکھتے ہیں۔”

       ہمارا وڈیو اعلامیہ دیکھنے کے لیے ملاحظہ کیجیے

http://www.youtube.com/watch?v=MV3AdDVpLFk&feature=youtu.be

ذریعہ: کیو ایس کویک کویریلی سائمنڈز، www.topuniversities.com

Leave a Reply