Tag Archives: Coalition for Mercury-Free Drugs (CoMeD)

گلوبل مرکری معاہدہ ادویات میں پارے کے استعمال پر پابندی لگا سکتا ہے

AsiaNet 45720

سلور اسپرنگ، میری لینڈ، یکم اگست 2011ء/پی آرنیوزوائر-ایشیانیٹ/

جمعہ 22 جولائی 2011ء کوکومیڈ (CoMeD) اور اقوام متحدہ کے ماحولیاتی پروگرام [http://www.unep.org ] (UNEP) نے پارے کے حوالے سے اپنے جامع عالمی معاہدے کا نظر ثانی شدہ متن جاری کیا ہے http://www.unep.org/hazardoussubstances/Portals/9/Mercury/Documents/INC3/3_3_drafttext_advance.pdf۔ پارے سے پاک ادویات کے حامی مجوزہ معاہدے میں “ضمیمہ سی (پارے پر مشتمل مصنوعات کی اجازت نہیں)” میں شامل ادویات کو دیکھ کر خوش ہوئے۔

کوالیشن فار مرکری-فری ڈرگز (CoMeD) http://mercury-freedrugs.orgنے جنوری 2011ء میں چیبا، جاپان میں منعقدہ اقوام متحدہ (یو این) مذاکرات میں حمایت کی کوششوں کے ذریعے اس اضافے کے آغاز میں مدد دیhttp://www.prnewswire.com/news-releases/united-nations-urged-to-ban-mercury-in-vaccines-119326979.html۔ کومیڈ صدر ریو لیزا سائیکس، جو ویکسین میں شامل پارے کے زہر پھیلنے سے مرض میں مبتلا ہونے والے ایک بچے کی والدہ ہیں، 150 شریک ممالک کے نمائندوں کے سامنے بیان کیا کہ کس طرح: [http://tinyurl.com/3mmcuue ] “حاملہ عورت اور بچوں میں غیر ضروری پارے کو بذریعہ سوئی داخل کرنا، چاہے وہ ویکسین کی صورت میں ہو یا دوا کی صورت، موجودہ اور نامعلوم خطرات کا باعث بنتا ہے۔”

تھمیروسل (49.6 فیصد پارہ بمطابق وزن)، جسے بدستور ویکسین محافظ اور ان-پروسس اسٹرلائزنگ ایجنٹ کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے http://www.fda.gov/BiologicsBloodVaccines/SafetyAvailability/VaccineSafety/UCM096228، غیر ضروری، اور بسا اوقات کئی ویکسینوں میں پوشیدہ اجزاء کی حامل ہے۔ اسے اعصابی نمو کے امراض [http://www.ncbi.nlm.nih.gov/pubmed/21549155 ]، سرطان [http://www.ncbi.nlm.nih.gov/pubmed/7854141 ]، پیدائشی نقائص [http://www.ncbi.nlm.nih.gov/pubmed/18049924 ] اور اسقاط حمل [http://www.ncbi.nlm.nih.gov/pubmed/1111489 ] میں استعمال کیا جاتا ہے ۔ تھمیروسل سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے میں نازائیدہ اور نوزائیدہ شامل ہیں [http://www.ncbi.nlm.nih.gov/pubmed/21350943 ]۔

چیبا میں اقوام متحدہ اجلاس میں شریک سفیروں سے خطاب کرتے ہوئے کومیڈ کے ڈاکٹر مارک آر گیئر نے مشاہدہ کیا http://mercury-freedrugs.org/docs/110127_CoMeD_PR_CoMeMRepeatsItsCallForBanOnHgInVaccines_b.pdf: “”اس معاہدے کو مکمل موثر بنانے کے لیے، اسے لازماً واضح کرنا ہوگا کہ انسانوں، خصوصاً حاملہ خواتین اور چھوٹے بچوں، پر پارے کے دانستہ اظہار کو برداشت نہیں کیا جائے گا۔”

ڈاکٹر گیئر کے تبصرے کا خاص طور پر ترقی پذیر ممالک کے نمائندوں کی جانب سے خیر مقدم کیا گیا۔ کومیڈ نمائندگان نے بند دروازے کے ساتھ ہونے والے سیشنز میں علاقائی ورکنگ گروپس کے ساتھ ملاقاتیں کیں اور 2-فینوزیتھانول کے استعمال کے امکانات کی وضاحت کی http://mercury-freedrugs.org/docs/20110105_CoMeD_onepager_Preservatives_rb.pdf، جو ویکسینوں اور دیگر دواؤں کے لیے تھمیروسل کا کم زہریلا متبادل ہے۔

ڈاکٹر گیئر نے اس امتیاز کی مذمت کی جس کے مطابق خوشحال اقوام کو پارے کی کم سطح والی ویکسین فراہم کی جاتی ہیں جبکہ غریب ممالک اب بھی خطرناک حد تک اضافہ شدہ پارے کی حامل ویکسین حاصل کر رہے ہیں http://mercury-freedrugs.org/docs/110126_CoMeD_PR_CallForBanOnHgInVaccines_b.pdf:

“دنیا بھر میں بچے، مقام پیدائش اور آمدنی کی سطح سے بالاتر ہو کر، پارے سے پاک ویکسین حاصل کرنے کا حق رکھتے ہیں۔ ترقی یافتہ ممالک کو کم پارے یا پارے سے مکمل طور پر پاک ویکسین فراہم کرنے اور ترقی پذیر ممالک کو پارے کی حامل ویکسین فراہم کرنے پر زور دینے کا عمل غلط ہے۔”

چیبا میں مذاکرات کے خاتمے تک ترقی پذیر ممالک کے سفیروں نے سیکرٹریٹ سے مطالبہ کیا کہ وہ ادویات میں پارے کی موجودگی کے محفوظ ہونے کا جائزہ لے۔

سائنسدانوں اور کومیڈ کے حامیوں کی ایک ٹیم نیروبی، کینیا میں 31 اکتوبر سے 4 نومبر 2011ء تک ہونے والے معاہدے کے مذاکرات کے اگلے مرحلے میں شرکت کرے گی http://www.unep.org/hazardoussubstances/Mercury/Negotiations/INC3/tabid/3469/Default.aspx، تاکہ اقوام متحدہ کے حتمی معاہدے میں پارے کی حامل ادویات پر عالمی سطح پر پابندی عائد کرنے کی حمایت جاری رکھی جا سکے۔

ذریعہ: کوالیشن فار مرکری-فری ڈرگز (CoMeD)

رابطہ: ریو لیزا کے سائیکس

کومیڈ صدر

+1-804-740-7128

lisa@mercury-freedrugs.org

Global Mercury Treaty May Include Ban on Mercury in Medicine

AsiaNet 45720

SILVER SPRING, Md., Aug. 1, 2011 /PRNewswire-AsiaNet/ –

CoMeD – On Friday, July 22, 2011, the United Nations Environment Programme [http://www.unep.org ] (UNEP) distributed a revised text for its comprehensive global treaty on mercury http://www.unep.org/hazardoussubstances/Portals/9/Mercury/Documents/INC3/3_3_drafttext_advance.pdf. Advocates for mercury-free drugs were gratified to see pharmaceuticals listed in “Annex C (Mercury-added product not allowed)” of the proposed treaty.

The Coalition for Mercury-free Drugs (CoMeD)
http://mercury-freedrugs.org helped initiate this addition through its advocacy efforts at the United Nations (UN) negotiations held in Chiba, Japan, in January 2011 http://www.prnewswire.com/news-releases/united-nations-urged-to-ban-mercury-in-vaccines-119326979.html. CoMeD President Rev. Lisa Sykes, the mother of a son diagnosed with vaccine-related mercury poisoning, described to representatives of over 150 participating nations how: [http://tinyurl.com/3mmcuue ] “… unnecessarily injecting mercury into pregnant women and children, as part of a vaccine or other drug, is an ongoing and often unrecognized crisis.”

Thimerosal (49.6% mercury by weight), still used as a vaccine preservative and in-process sterilizing agent http://www.fda.gov/BiologicsBloodVaccines/SafetyAvailability/VaccineSafety/UCM096228,
is an unnecessary, and sometimes undisclosed, component in many vaccines. Its use is associated with neurodevelopmental disorders [http://www.ncbi.nlm.nih.gov/pubmed/21549155 ], cancer [http://www.ncbi.nlm.nih.gov/pubmed/7854141 ], birth defects
[http://www.ncbi.nlm.nih.gov/pubmed/18049924 ] and miscarriage
[http://www.ncbi.nlm.nih.gov/pubmed/1111489 ]. Those harmed most by
Thimerosal in vaccines are the unborn and newborn
[http://www.ncbi.nlm.nih.gov/pubmed/21350943 ].

Addressing the diplomats attending the UN meeting in Chiba, Dr. Mark R. Geier of CoMeD observed

http://mercury-freedrugs.org/docs/110127_CoMeD_PR_CoMeMRepeatsItsCallForBanOnHgInVaccines_b.pdf

: “For this treaty to be fully effective, it must make clear that the intentional exposure of humans, especially pregnant women and young children, to mercury, will not be tolerated.”

Dr. Geier’s comments were especially well-received by the diplomats from developing nations. CoMeD representatives met with regional working groups in closed-door sessions and explained the feasibility of using 2-phenoxyethanol http://mercury-freedrugs.org/docs/20110105_CoMeD_onepager_Preservatives_rb.pdf, a much less toxic alternative to Thimerosal, in vaccines and other drugs.

Dr. Geier challenged the inequity of providing wealthy nations with vaccines having reduced levels of mercury while poor nations still receive vaccines containing dangerously high levels of mercury http://mercury-freedrugs.org/docs/110126_CoMeD_PR_CallForBanOnHgInVaccines_b.pdf:

“Children around the world, no matter their place of birth or their income level, deserve safe mercury-free vaccines. The practice of providing mercury-reduced and mercury-free vaccines to developed countries while insisting that developing nations take mercury-containing ones is wrong.”

By the end of negotiations in Chiba, diplomats from developing countries requested the Secretariat to assess the safety of mercury in drugs.

A team of scientists and advocates from CoMeD will attend the next treaty negotiation in Nairobi, Kenya, from October 31 through November 4, 2011 http://www.unep.org/hazardoussubstances/Mercury/Negotiations/INC3/tabid/3469/Default.aspx,
to support keeping this global ban on mercury-containing drugs in the finalized UN treaty.

SOURCE: Coalition for Mercury-Free Drugs (CoMeD)

CONTACT: Rev. Lisa K. Sykes
CoMeD President
+1-804-740-7128
lisa@mercury-freedrugs.org