Tag Archives: CGAP

‫سی جی اے پی 11 واں سالانہ تصویری مقابلہ جیتنے والوں نے اختیار، لچک اور جدت کو قید کیا

واشنگٹن، 29 نومبر 2016ء/پی آرنیوزوائر/–

سی جی اے پی نے آج 2016ء تصویری مقابلے کے فاتح کے طور پر میانمر کے زے یار لن کے نام کا اعلان کیا ہے۔ فاتحانہ تصویر، “مدد کرنے والا ہاتھ بڑھائیں،” کو اپنی شاندار بناوٹ اور فروخت کے لیے مٹی کے برتن بنانے والے باپ کی مدد کرنے والی لڑکی کی محبت آمیز تصویر کشی کی وجہ سے 70 ممالک سے آنے والی 3,000 سے زیادہ درخواستوں سے منتخب کی گئی۔

۔آنٹرایکٹو ملٹی میڈیا خبری اعلامیہ کا تجربہ یہاں اٹھائیں: http://www.multivu.com/players/English/7878251-2016-cgap-photo-contest-winners

تصویر فوٹوگرافر کے ینگون میں واقع گھر کے قریب توانتے قصبے میں لی گئی تھی۔ لن نے کہا کہ گو کہ وہ تجارتی لحاظ سے ایک ملاح ہے، لیکن فوٹوگرافی اس کا حقیقی شوق ہے۔ انہوں نے کہا کہ “میرا ماننا ہے کہ تصویر کشی لوگوں کو دیکھنے اور محسوس کرنے میں مدد دیتی ہے۔ میں لوگوں اور مقامات کی ثقافت اور ان کی روزمرہ زندگی کو محفوظ کرنا پسند کرتا ہوں۔”

گو کہ توانتے کے مٹی کے برتن پورے میانمر میں مشہور ہیں اور ان کی بڑی طلب ہے، لیکن نوجوان نسل قصبے سے باہر مواقع کی تلاش جاری رکھے ہوئے ہے۔ ججوں نے تبصرہ کیا کہ کس طرح تصویر نہ صرف ایک قابل قدر، لیکن گھٹتی ہوئی مہارت کی ایک نسل سے دوسری نسل تک منتقلی کو محفوظ کرتی ہے۔

جیتنے والی تصاویر دیکھیں >>

دنیا بھر میں دو ارب افراد بچت کھاتوں اور قرضوں جیسی بنیادی مالیاتی خدمات تک رسائی نہیں رکھتے۔ اس کے ثبوت بڑھ رہے ہیں کہ مالیاتی شمولیت اقوام متحدہ کے عالمی ترقی ایجنڈا کے لیے اختیار کیے گئے کئی تحفظ پذیر ترقی اہداف کو ممکن بنانا والا اہم عنصر ہے، جیسا کہ معیاری تعلیم کا فروغ اور صنفی برابری کی ترویج۔ 11 سالوں سے سالانہ سی جی اے پی تصویری مقابلہ ایسی اصل اور زبردست تصویریں ڈھونڈ رہا ہے جو دنیا بھر میں عوام کی زندگی پر مالیاتی شمولیت کے اثر کو ظاہر کرتی ہیں۔

2016ء سی جی اے پی تصویری مقابلے نے چار کلیدی شعبوں میں درخواستیں طلب کی تھیں جو مالیاتی شمولیت کو آگے بڑھانے میں اہم ہیں: (1) موبائل رقم اور ڈیجیٹل مالیات میں جدت؛ (2) عورتوں کا معاشی اختیار؛ (3) لچک؛ اور (4) چھوٹے کاروبار۔ ججوں کا پینل نکول کاپیلو، سینئر فوٹو مینیجر نیشنل جیوگرافک؛ ایمیلی ایپسٹین، وژوئل ایڈیٹر دی اٹلانٹک؛ اور اندرا ولیمز بابک، ڈائریکٹر فوٹوگرافر اور وژوئل ریسورسز دی نیوزیئم پر مشتمل تھا۔

تین ججوں نے انتخاب کے عمل پر اپنی رائے پیش کیں۔

نکول کاپیلو نے کہا کہ “دنیا بھر کے افراد کی خود رائی اور لچک اور ثابت قدمی کو دیکھنا بہت شعور پیدا کرنا والا” تھا۔

ایمیلی ایپسٹین نے کہا کہ “یہ کام محض وائر سروسز پر وجود نہیں رکھتا۔ پیغام اپنے نصیب کے خود مالک افراد کو احترام دے رہا ہے۔”

اندرا ولیمز بابک نے کہا کہ “فوٹوگرافی کسی کہانی کو بیان کرنے کا سب سے طاقتور طریقہ ہے۔ اپنی کہانی کو تصاویر کے ذریعے بیان کرنا، جو سب کے لیے قابل رسائی ہے، مقصد کو مزید آگے بڑھانے کا ایک اچھا طریقہ ہے۔”

2016ء بڑے انعام کے فاتح کو فوٹوگرافی کے سامان کے لیے 2,000 ڈالر گفٹ سرٹیفکیٹ اور اپنی جیتنے والی تصویر کی نیو یارک شہر کو ٹائمز اسکوائر جمبوٹرون پر پیش کرنے کا موقع بھی ملے گا۔

بڑے انعام کا فاتح اور فائنل تک پہنچنے والے  

  • بڑا انعام: مدد کے لیے ہاتھ بڑھائیں – زے یار لن، میانمر
  • دوسرا انعام: پانی میں زندگی – سجن سرکار، بھارت
  • تیسرا انعام: کسان کا خاندان – پیائی فیو تھیٹ پینگ، میانمر

موضوعاتی فاتحین

  • ڈجیٹل مالیات میں موبائل پیسہ اور جدت: ناریل کے کھیت – ایکارین ایکارچریاونگ، تھائی لینڈ
  • عورتوں کا معاشی اختیار: تیرتی زندگی – محمد زاکر المجید، بنگلہ دیش
  • لچک: خواب نے معذوری کو شکست دی – فیصل عظیم، بنگلہ دیش
  • چھوٹے کاروبار: سجاوٹی چھتری بنانے والا – اگونگ لاویریسا ستیاوان، انڈونیشیا

علاقائی فاتحین:

  • افریقہ: تخیل – وم اومپیر، کینیا
  • مشرقی یورپ و وسطی ایشیا: فیلٹنگ – بی سی
  • مشرقی ایشیا و بحر الکاہل: پرانا ٹی وی دوبارہ استعمال شدہ – لائی ہوانگ لونگ، ویت نام
  • لاطینی امریکا و کیریبیئن: ورمی جلاکاتا 3 – ڈيوڈ مارٹن ہوامانی بیڈویا، پیرو
  • مشرق وسطیٰ و شمالی افریقہ: سیکرک) قربانی – براہیم فراجی، مراکش
  • جنوبی ایشیا: ذمہ داری – سجن سرکار، بھارت

سی جی اے پی (کنسلٹیٹو گروپ ٹو اسسٹ دی پؤر) 30 معروف اداروں کی ایک عالمی شراکت داری ہے جو مالیاتی شمولیت کو آگے بڑھانے کے خواہاں ہیں۔ سی جی اے پی عملی تحقیق و اور مالیاتی خدمات فراہم کنندگان، پالیسی سازوں اور بڑے پیمانے پر طریقوں کو ممکن بنانے کے لیے سرمایہ کاروں کی متحرک شمولیت کے ذریعے جدید حل فراہم کرتا ہے۔ عالمی بینک میں مقیم سی جی اے پی غریبوں کو اپنی زندگیاں بہتر بنانے کے لیے درکار مالیاتی خدمات تک رسائی کو بڑھا کر شواہد کی بنیاد پر تیار کردہ ایک حمایتی پروگرام کے ساتھ ذمہ دار مارکیٹ ترقی کا ایک عملی طریقہ ملاتا ہے۔ مزید www.cgap.org پر۔

لوگو – http://photos.prnewswire.com/prnh/20151216/296527LOGO

Annual CGAP Photo Contest Open for Entries

WASHINGTON, June 30, 2016 /PRNewswire/ — The 11th Annual CGAP Photo Contest is now open for entries; the deadline for submissions is September 7, 2016. Amateur and professional photographers are invited to share original and powerful images that capture the importance of access to basic financial services for people around the world.

Experience the interactive Multimedia News Release here: http://www.multivu.com/players/English/7554953-cgap-annual-photo-contest/

Digital innovations, including the growing use of smartphones, and new financial products that better meet the needs of customers are making it easier for poor and rural customers to manage their daily finances, grow a business and respond to an emergency. However, 2 billion people still lack access to basic financial services such as savings accounts and credit. Closing this gap can help to reduce extreme poverty and increase prosperity.

Against this background, this year’s Photo Contest calls for photographs that reflect the following four themes:

  • Mobile money and innovations in digital finance
  • Women’s economic empowerment
  • Resilience
  • Small businesses

Submissions may represent a range of products, institutions and approaches within these themes and touch on a broad variety of social, economic, developmental and technological issues. Entries are welcome from all regions, in both rural and urban settings.

Photographers of the winning images will receive prizes and recognition of their entries in several categories including regional, people’s choice and special mentions in the four thematic areas. The 2015 contest received more than 3,300 entries from photographers in 77 countries. Winners were showcased by top global media outlets and viewed tens of thousands of times online.

Submit your photos >>

View the winners of the 2015 CGAP Photo Contest here.

CGAP (Consultative Group to Assist the Poor) is a global partnership of 34 leading organizations that seek to advance financial inclusion. CGAP develops innovative solutions through practical research and active engagement with financial service providers, policy makers, and funders to enable approaches at scale. Housed at the World Bank, CGAP combines a pragmatic approach to responsible market development with an evidence-based advocacy platform to increase access to the financial services the poor need to improve their lives. More at www.cgap.org.

CGAP Announces Winner Of Photo Contest In 10th Year

WASHINGTON, Oct. 27, 2015 /PRNewswire/ — CGAP today announced its 2015 Photo Contest winner as Sujan Sarkar of India. The winning photo, called “Paddy Cultivation,” was chosen from more than 3,300 entries from 77 countries for its breathtaking composition and immersive quality. The photo showed workers in a paddy field in West Bengal, India capturing one of the key themes of the contest – smallholder farmers and their families. The panel of three judges said Sarkar’s photo symbolized the family’s livelihood, home, and how they support themselves.

Experience the interactive Multimedia News Release here:  http://www.multivu.com/players/English/7554951-cgap-photo-contest-winner/

A full gallery of the 27 winning photos can be viewed in an online photo essay.

There are 2 billion people around the world who lack access to formal financial services. Over the past decade, the annual CGAP Photo Contest has sought to document the struggles and successes of those who are often excluded from the financial system. Said Greta Bull, CEO of CGAP: “The Photo Contest enables us to show in a very visual way the resilience and challenges facing the working poor. It puts a face on financial inclusion and the work we do.”

The 2015 CGAP Photo Contest invited submissions in four key areas that are instrumental to advancing financial inclusion: (1) Digital financial services and mobile banking; (2) Women’s use of financial services; (3) Microfinance for small business enterprises; and (4) Smallholder farmers and their families.

The panel of judges comprised of Nicole Crowder, Photo Editor for The Washington Post’s photography blog, In Sight; Corinne Dufka, Associate Director at Human Rights Watch and an award-winning photographer; and Leena Jayaswal, Director of Photography Program and Associate Professor at the American University in Washington, D.C.

Through a highly competitive process, the judges selected two other finalists, thematic and regional winners, and special mentions. Liming Cao of China’s photo, “Fishing with a Net,” won second place, for its beautiful framing, unique softness, and evocation of movement. The third place prize was awarded to Pranab Basak of India for the photo, “Hands for Freedom” which the judges agreed captured the essence of love – something that is “hard to photograph.”

The People’s Choice Award went to Vikash Singh of India, whose photo, “Farming Lady,” earned more than 200 votes online.

The 2015 Grand Prize winner will receive a $2,000 gift certificate for photography equipment and a display of his winning photograph on the Times Square Jumbotron in New York City.

Grand Prize Winner and Finalists

  • Grand Prize: Paddy Cultivation – Sujan Sarkar, India
  • Second Place: Fishing with a Net – Liming Cao, China
  • Third Place: Hands for Freedom – Pranab Basak, India

Thematic Winners

  • Digital Financial Services and Mobile Banking: Happy Vendor – Subrata Adkhikary, India
  • Women’s Use of Financial Services: Creating the Creator – Prathamesh Vinod Ghadekar, India
  • Microfinance for Small Business Enterprises: Sari Spider – Tatiana Sharapova, Russian Federation
  • Smallholder Farmers and their Families: Work in Mountains – Tatiana Sharapova, Russian Federation

Regional Winners

  • Eastern Europe and Central Asia Region: Tomato – Bülent Suberk, Turkey
  • East Asia and Pacific Region: Overcoming Sandhill – Le Minh Quoc, Vietnam
  • Latin America and Caribbean Region: Eleuterio the Hairdresser – David Martin Huamani Bedoya, Peru
  • Middle East and North Africa Region: Eye for Detail – Evans Claire Onte, United Arab Emirates
  • South Asia Region: Young Mother Is Making a Wooden Doll – Goutam Daw, India
  • Sub-Saharan Africa Region: Farida’s Maize Harvest – Hailey Tucker, United States

Honorable Mentions

  • Gravel Workmen – Faisal Azim, Bangladesh
  • The Struggle Mother – Giri Wijayanto, Indonesia
  • Morning – Do Hieu Liem, Vietnam
  • Grazing in the Morning – Liming Cao, China
  • For the Next Journey – Loc Mai, Vietnam
  • Volcanes – Luis Sanchez Davilla, Spain
  • Betel Nut – M. Yousuf Tushar, Bangladesh
  • Camel Market 2 – Mohamed Kamal, Egypt
  • The Worker – Mohammad Rakibul Hasan, Bangladesh
  • Human Pushing Xiep (Netting) – Phuc Ngo Quang, Vietnam
  • A Small Shop Window – Rana Pandey, India
  • Iron Ribs – Subhasis Sen, India
  • An Old Lady Photographer – Supriya Biswas, India
  • Duck Egg Collection – Tran Van Tuy, Vietnam

CGAP (Consultative Group to Assist the Poor) is a global partnership of 34 leading organizations that seek to advance financial inclusion. More at www.cgap.org.

سی جی اے پی نے 10 ویںسال تصویری مقابلے کے فاتح کا اعلان کردیا

واشنگٹن، 27 اکتوبر 2015ء/پی آرنیوزوائر/–

سی جی اے پی نے آج 2015ء تصویری مقابلے کے فاتح کا اعلان کردیا ہے جو بھارت کے سجن سرکار ہیں۔ جیتنے والی تصویر “دھان کی کاشت” کو اس کی حیران کن اور عمیق معیار کی وجہ سے 77 ممالک سے آنے والی 3,300 درخواستوں میں سے منتخب کیا گیا۔ تصویر کام کرنے والوں کو مغربی بنگال، بھارت میں دھان کے کھیت میں کام کرتے ہوئے دکھاتی ہے، جو مقابلے کے کلیدی موضوعات میں سے ایک کو تسخیر کرتی ہے ، چھوٹے کاشت کار اور ان کے اہل خانہ۔ تین ججوں کے پینل نے کہا کہ سرکار کی تصویر ظاہر کرتی ہے کہ خاندان کے ذریعہ معاش، گھر اور وہ خود کو کس طرح تقویت دیتے ہیں۔

انٹرایکٹو ملٹی میڈیا خبری اعلامیہ کا تجربہ یہاں اٹھائیں:

جیتنے والی 27 تصاویر کی مکمل گیلری اس آن لائن تصویری مضمون میں دیکھی جا سکتی ہیں۔

دنیا بھر میں دو ارب افراد ایسے ہیں جو باضابطہ مالیاتی خدمات تک رسائی نہیں رکھتے۔ گزشتہ دہائی میں سالانہ سی جی اے پی تصویری مقابلے نے مالیاتی نظام سے باہر موجود افراد کی جدوجہد اور کامیابی کو دستاویزی شکل دینے کی کوشش کی ہے۔ سی جی اے پی کی سی ای او گریٹا بل کہتی ہیں کہ “تصویری مقابلہ ہمارے لیے کام کرنے والے غریب افراد کو درپیش مسائل اور چیلنجز کا بہترین منظر پیش کرنا ممکن بناتا ہے۔ یہ مالیاتی شمولیت اور ہمارے کام کو ایک چہرہ عطا کرتاہے۔”

2015ء سی جی اے پی تصویری مقابلے نے چار کلیدی شعبوں میں تصویریں طلب کیں جو مالیاتی شمولیت کو بڑھانے میں ضروری ہیں: (1) ڈیجیٹل مالیاتی خدمات اور موبائل بینکاری؛ (2) عورتوں کی جانب سے مالیاتی خدمات کا استعمال؛ (3) چھوٹے کاروباری اداروں کے لیے مائیکروفنانس؛ اور (4) چھوٹے کاشت کار اور ان کے اہل خانہ۔

ججوں کا پینل واشنگٹن پوسٹ کے فوٹوگرافی بلاگ اِن سائٹ کے لیے فوٹو ایڈیٹر پینل نکول کراؤڈ،؛ ہیومن رائٹس واچ کی ایسوسی ایٹ ڈائریکٹر اور ایک اعزاز یافتہ فوٹوگرافر کورین دفکا؛ اور امریکن یونیورسٹی میں فوٹوگرافی پروگرام کی ڈائریکٹر اور ایسوسی ایٹ پروفیسر لینا جیسوال پر مشتمل تھا۔

ایک بہت کڑےعمل کے ذریعے ججوں نے دو دیگر حتمی امیدواروں، موضوعاتی اور علاقائی فاتحین، اور خصوصی انعام جیتنے والوں کا اعلان کیا۔ چین کے لمنگ کاؤ کی تصویر “جال کے ذریعے ماہی گیری” نے اپنی بہترین فریمنگ، بے مثل نزاکت اور تحریک پر ابھارنے پر دوسرا انعام جیتا۔ تیسرا انعام بھارت کے پرناب باسک کو ان کی تصویر “آزادی کے ہاتھ” پر ملا، جس پر ججوں نے اتفاق کیا کہ اس نے محبت کی روح کو قید کرلیا ہے – ایسی چیز جس کی “تصویر کشی مشکل ہے۔”

عوامی پسند کا ایوارڈ بھارت کے وکاش سنگھ کو گیا، جن کی تصویر “کاشت کار عورت” نے آن لائن 200 سے زیادہ ووٹ لیے۔

2015ء کے بڑے انعام کے فاتح کو فوٹوگرافی کا سامان خریدنے کے لیے 2 ہزار ڈالرز مالیت کا گفٹ سرٹیفکیٹ ملے گا اور ان کی تصویر نیو یارک شہر میں ٹائمز اسکوائر جمبوٹرون پر لگے گی۔

بڑے انعام کے فاتح اور حتمی امیدواران

  • بڑا انعام: دھان کی کاشت – سجن سرکار، بھارت
  • دوسرا انعام: جال کے ذریعے ماہی گیری – لمنگ کاؤ، چین
  • تیسرا انعام: آزادی کے ہاتھ – پرناب باسک، بھارت

موضوعاتی فاتحین

  • ڈیجیٹل مالیاتی خدمات اور موبائل بینکاری: خوش دکاندار – سبرتاادھکی کاری، بھارت
  • عورتوں کی جانب سے مالیاتی خدمات کا استعمال: تخلیق کار کی تخلیق – پرتھامیشونودگھڈیکر، انڈیا
  • چھوٹے کاروباری اداروں کے لیے مائیکروفنانس: ساری مکڑا – تاتیاناشیراپوا، روس
  • چھوٹے کاشت کار اور ان کے اہل خانہ: پہاڑوں میں کام – تاتیاناشیراپوا، روس

علاقائی فاتحین

  • خطہ مشرقی یورپ اور وسطی ایشیا: ٹماٹر – بلند سوبرک، ترکی
  • خطہ مشرقی ایشیا و بحر الکاہل: ریت کے ٹیلے کو مغلوب کرنا – لی منہ کوک، ویت نام
  • خطہ لاطینی امریکا و کیریبین: الیوتیریو حجام – ڈیوڈ مارٹن ہوامانی بدیو، پیرو
  • خطہ مشرق وسطیٰ و شمالی افریقہ : آنکھ کی تفصیل – ایونزکلیئراونتے، متحدہ عرب امارات
  • خطہ جنوبی ایشیا: ایک نو عمر ماں لکڑی کی گڑیاں بناتی ہوئی – گوتم دا، بھارت
  • خطہ نیم صحراوی افریقہ: فریدا کی مکئی کی فصل کٹائی – ہیلی ٹکر، امریکا

خصوصی انعام

  • پتھر پر کام کرنے والا – فیصل عظیم، بنگلہ دیش
  • جدوجہد کرتی ماں – گری وجایانتو، انڈونیشیا
  • صبح – ڈوہیولیم، ویت نام
  • صبح صبح چرانا – لیمنگ کاؤ، چین
  • اگلے سفر کے لیے – لوک مائی، ویت نام
  • آتش فشاں – لوئسسانچیزڈیویلا، اسپین
  • چھالیہ – ایم یوسف توشر، بنگلہ دیش
  • اونٹ مارکیٹ 2 – محمد کمال، مصر
  • کارکن – محمد رقیب الحسن، بنگلہ دیش
  • انسان جالی کھینچتے ہوئے – فوک نکوکوانگ، ویت نام
  • ایک چھوٹی دکان کھڑی – رانا پانڈے، بھارت
  • فولادی پسلیاں – سبھاسس سین، بھارت
  • ایک بوڑھی خاتون فوٹوگرافر – سپریا بسواس، بھارت
  • بطخ کے انڈوں کا ذخیرہ – تران وانتوئے، ویت نام

سی جی اے پی (کنسلٹیٹو گروپ ٹو اسسٹ دی پور) 34 معروف انجمنوں کی ایک عالمی شراکت داری ہے جو مالیاتی شمولیت کو بڑھانا چاہتی ہے۔ مزید کے لیے www.cgap.org۔

2015ء سی جی اے پی تصویری مقابلہ درخواستوں کی وصولی شروع

واشنگٹن، 24جون 2015ء/ پی آرنیوزوائر– اب جبکہ سی جی اے پی دنیا بھر کے نوآموز اور پیشہ ور افراد کی غیر معمولی فوٹوگرافی کو نمایاں کرنے کے کامیاب 10 سالوں کا جشن منا رہا ہے، اس کے 2015ء سالانہ تصویری مقابلے کے لیے درخواستوں کی وصولی شروع ہوگئی ہے۔

Enter%20CGAP 2015ء سی جی اے پی تصویری مقابلہ درخواستوں کی وصولی شروع

Enter CGAP’s 10th Annual Photo Contest and Tell the Story of Financial Inclusion.

انٹرایکٹو ملٹی میڈیا خبری اعلامیہ کا تجربہ یہاں اٹھائیے: http://www.multivu.com/players/English/7267353-cgap-photo-contest

تصویر: http://photos.prnewswire.com/prnh/20150623/224869

2015ء سی جی اے پی تصویری مقابلے کے لیے اپنی درخواستیں 9 ستمبر 2015ء سے قبل یہاں آن لائن جمع کروائیں۔

گزشتہ دہائی میں سی جی اے پی مقابلے ان نمایاں طریقوں کو دستاویزی شکل دے چکے ہیں کہ باضابطہ مالیاتی خدمات تک رسائی غریب افراد کی زندگیوں کو بہتر بنا سکتی ہے۔ ان سالوں میں بہت کچھ  تبدیل   ہوچکا ہے اور ڈيجیٹل مالیاتی خدمات جیسے جدید پلیٹ فارمز دنیا بھر میں 2 ارب سے زیادہ ایسے افراد کو امید اور چیلنج دونوں فراہم کررہے ہیں جو بینک کی خدمات سے محروم ہیں۔

مالیاتی شمولیت کے تبدیل ہوتے میدان پر توجہ مرکوزرکھنے کے لیے رواں سال کے مقابلے کی توجہ چار کلیدی موضوعات پر ہوگی: ڈیجیٹل مالیاتی خدمات؛ عورتوں کا مالیاتی خدمات کا استعمال؛ چھوٹے کاروباری اداروں کے لیے مائیکروفنانس اور چھوٹے کاشت کار اور ان کا خاندان۔ درخواستیں ان موضوعات کے اندر مصنوعات،اداروں اور طریقوں کا احاطہ کرسکتی ہیں، اور سماجی، اقتصادی، ترقیاتی اور تکنیکی مسائل کی وسیع میدان کو چھو سکتی ہیں۔ دیہی اور شہری دونوں علاقوں میں تمام خطوں کے لیے درخواستوں کا خیرمقدم کیا جائے گا۔

ماضی کے فاتحین نے زبردست اور تخلیقی تصاویر پیش کیں جو سرفہرست عالمی ذرائع ابلاغ میں نمایاں ہوئیں۔ گارجین نے 2014ء مقابلے ، جس نے 95 ممالک سے تقریباً 5,000 درخواستیں وصول کیں، کو “مالیاتی خدمات تک بڑھتی ہوئی رسائی کی اہمیت کے حوالے سے شعور اجاگر کرنے” والا قرار دیا جبکہ بزنس انسائیڈر نے کہا کہ مقابلے نے “ترقی پذیر دنیا کے کاروباری منتظمین کو بلند کرنے والی تصاویر” کو نمایاں کیا۔

2015ء میں متعدد انعامات جاری کیے جائیں گے جن میں پہلا، دوسرا اور تیسرا انعام شامل ہوگا، اور ساتھ ساتھ علاقائی فاتحین اور عوامی ووٹ کے ذریعے ایک پیپلز چوائس ایوارڈ بھی۔ ووٹنگ 10 ستمبر سے 17 ستمبر تک ہوگی۔

فوٹوگرافی کے ذریعے دنیا کو مالیاتی شمولیت کا “چہرہ” دکھانے میں مدد کیجیے اور یہ کہ کس طرح مالیاتی شمولیت میں بڑھتا ہوا اضافہ غریبوں کی زندگیوں کو بہتر بنا سکتا ہے۔ اپنی تصاویر جمع کروائیے اور اعلان کو اپنے سماجی رابطوں میں پیش کیجیے۔

سی جی اے پی کے بارے میں

سی جی اے پی (دی کنسلٹیٹو گروپ ٹو اسسٹ دی پؤر) 34 معروف انجمنوں کی ایک عالمی شراکت داری ہے جو مالیاتی شمولیت کو ترقی دینے کی خواہشمند ہیں۔ سی جی اے پی عملی تحقیق اور مالیاتی خدمات فراہم کنندگان، پالیسی سازوں اور عطیہ دہندگان کے ساتھ شمولیت کے ذریعے جدید حل تیارکرتا ہے تاکہ وسیع پیمانے پر انہیں ممکن  بنایا جا سکے۔ عالمی بینک میں قائم سی جی اے پی شواہد کی بنیاد پر تائید کے پلیٹ فارم کے ساتھ ذمہ دار مارکیٹ ترقی تک عملی طریقے جوڑتا ہے تاکہ غریبوں کی کو زندگیوں کو بہتر بنانے کے لیے ضروری مالیاتی خدمات تک بڑھتی ہوئی رسائی حاصل ہو۔ مزید جانیں  www.cgap.orgپر۔

2015 CGAP Photo Contest Now Open for Entries

WASHINGTON, June 24, 2015 / PRNewswire — As CGAP celebrates ten years of successfully highlighting exceptional photography from amateurs and professionals from around the world, its 2015 annual Photo Contest is now open for entries.

Experience the interactive Multimedia News Release here:  http://www.multivu.com/players/English/7267353-cgap-photo-contest/

Photo –  http://photos.prnewswire.com/prnh/20150623/224869

Submit your entries to the 2015 CGAP Photo Contest online before September 9, 2015.

Over the past decade, the CGAP Photo Contest has documented the remarkable ways that access to formal financial services can improve poor people’s lives. Much has changed and evolved throughout these years and innovative platforms such as digital financial services offer both hope and challenge to the over 2 billion unbanked people around the world.

To focus on the changing financial inclusion space, this year’s contest will focus on four key themes: digital financial services; women’s use of financial services; microfinance for small business enterprises; and smallholder farmers and their families. Submissions may represent a range of products, institutions, and approaches within these themes, and may touch on a broad variety of social, economic, developmental, and technological issues. Entries are welcomed from all regions, in both rural and urban settings.

Past winners include stunning and creative images that have been featured in top global media. The Guardian credited the 2014 contest, which received nearly 5,000 entries from 95 countries, with “raising awareness about the importance of increased access to financial services,” while Business Insider said the contest highlights “uplifting photos of entrepreneurs in the developing world.”

Several prizes will be issued in 2015, including a first, second, and third prize, as well as regional winners and a People’s Choice winner determined by popular vote. The voting will take place between September 10 and September 17.

Help show the world, through photography, the “face” of financial inclusion and how increased access to financial services can improve the lives of the poor. Submit your photos and share this announcement with your networks.

About CGAP
CGAP (the Consultative Group to Assist the Poor) is a global partnership of 34 leading organizations that seek to advance financial inclusion. CGAP develops innovative solutions through practical research and active engagement with financial service providers, policy makers, and funders to enable approaches at scale. Housed at the World Bank, CGAP combines a pragmatic approach to responsible market development with an evidence-based advocacy platform to increase access to the financial services the poor need to improve their lives. More at www.cgap.org.