Category Archives: Urdu

‫ماہرین: متحدہ عرب امارات کے نئے قانون “اچھے اخلاق اور رویّے” کی سند کا مطلب ہے آجروں کو ہوشیار رہنا ہوگا

سی آر آئی گروپ متحدہ عرب امارات کے تمام اداروں پر پس منظر کی جامع جانچ کرنے پر زور دیتا ہے

لندن، 16 فروری 2018ء/پی آرنیوزوائر/–

متحدہ عرب امارات میں ملازمت ویزا کے لیے درخواست دینے والے کے لیے نئے قانون کی ضرورت ہے کہ انہیں “گڈ کنڈکٹ سرٹیفکیٹ” یعنی اچھے اخلاق کی سند حاصل کرنا ہوگی جس کا مقصد زیادہ محفوظ اور پرامن برادری کی تشکیل ہے۔ یہ قانون متحدہ عرب امارات کی حکومت کے حکم سے 4 فروری سے نافذ العمل ہے۔https://prnewswire2-a.akamaihd.net/p/1893751/sp/189375100/thumbnail/entry_id/0_2as0f0d4/def_height/400/def_width/400/version/100012/type/1

https://mma.prnewswire.com/media/431851/Corporate_Research_and_Investigations_Logo.jpg

پس منظر کی جانچ اور مناسب احتیاط کی خدمات فراہم کرنے والے عالمی ادارے کارپوریٹ ریسرچ اینڈ انوسٹی گیشنز ایل ایل سی “سی آر آئی گروپ” کے ماہرین کے مطابق مختصر مدت میں کاروباری رہنماؤں کو ملازمت کے فراڈ میں ممکنہ اضافے کے حوالے سے چوکنّا رہنا چاہیے۔

سی آر آئی گروپ کے مطابق متحدہ عرب امارات میں ملازمت کے لیے درخواست دینے والے غیر ملکی امیدواروں کی بڑی تعداد کا مطلب ہے کہ اسناد کو حاصل کرنے کی دوڑ لگے گی،جس میں چند افراد کی جانب سے مطلوبہ معیارات کو پورا کرنے کے لیے جعلی دستاویزات حاصل کرنے کا خدشہ بھی موجود ہے۔ اس کے علاوہ درخواست گزاروں کی جانب سے اچھے اخلاق کی جعلی دستاویزات پیش کرنے کا بھی خطرہ ہے تاکہ ملازمت کا ویزا جلد حاصل کر سکیں۔

“ایک اہم نیا قانون ہے جو متحدہ عرب امارات کو کہیں زیادہ محفوظ افرادی قوت کو یقینی بنانے میں مدد دے گا۔” ظفر انجم، سی آر آئی گروپ کے سی ای او نے کہا، “البتہ یہ تمام اداروں کے لیے بھی اہم وقت ہے کہ وہ قبل از ملازمت پس منظر کی جامع جانچ کریں۔ سی آر آئی گروپ ماہرانہ سطح پر یہ خدمت فراہم کرتا ہے اور ہم گڈ کنڈکٹ سرٹیفکیٹس کی اصلیت کی توثیق بھی کر سکتے ہیں۔ 80 ممالک میں اپنی صلاحیتوں کے ساتھ ہمارے پاس وہ معلومات اور وسائل ہیں کہ جان سکیں کہ سرٹیفکیٹ اصل ہیں اور نقلی یا جعلی نہیں۔”

سی آر آئی گروپ نے ایک خصوصی سروس بھی جاری کی ہے جو ڈاکیوچیک انٹرنیشنل ایل ایل سی کہلاتی ہے اور گڈ کنڈکٹ سرٹیفکیٹس کی تصدیق، ڈپلوما، تحریری نسخوں اور اسناد، تعلیم، کردار کے حوالے سے اسناد/ خطوط جیسی دستاویزات کی تصدیق کی اصلیت کی توثیق کے لیے سرکاری و نجی شعبے میں اداروں کو تصدیق کی اضافی سپورٹ دیتی ہے۔

انجم نےاداروں کےفوری قدم اٹھانے کی حوصلہ افزائی کی کیونکہ قانون پہلے ہی نافذ العمل ہے: “وقت ہی سب کچھ ہے۔” مزید معلومات کے لیے ہم سے verify@docucheck.ae پر رابطہ کیجیے۔

سی آر آئی گروپ کے بارے میں

گزشتہ 28 سالوں میں سی آر آئی گروپ ادارہ جاتی تفتیش اور خطرات سے نمٹنے میں ایک عالمی رہنما کی حیثیت سے ابھراہے، جو چھ براعظموں میں نامور صارفین کے لیے خدمات فراہم کر رہا  ہے۔ سی آر آئی گروپ قانونی تکمیل، مالیاتی نتیجہ خیزی اور بیرونی شراکت داروں، رسد کنندگان اور کسی ادارے سے منسلک ہونے کے خواہشمند صارفین کے لیے کاروباروں کو تحفظ دیتا ہے۔

رابطہ سی آر آئی گروپ
انیل سوناگر
مارکیٹنگ مینیجر
کارپوریٹ ریسرچ اینڈ انوسٹی گیشنز ایل ایل سی
917-918، لبرٹی ہاؤس، ڈی آئی ایف سی، دبئی، متحدہ عرب امارات
ٹیلی فون: 3589884 4 971+| 251042433 971+
www.CRIGroup.com

لوگو – https://mma.prnewswire.com/media/431851/Corporate_Research_and_Investigations_Logo.jpg

ہاکر پیسفک ایمبریئر ایگزیکٹو جیٹس کے لیے سپورٹ کے دس سال کا جشن مناتا ہوا

– ہاکر پیسفک نے ایمبریئر ایگزیکٹو جیٹس کے لیے اسکی سپورٹ میں  متعدد “عالمی اولین” حاصل کیے

سنگاپور، 6 فروری 2018ء/پی آرنیوزوائر/–

آج سنگاپور ایئرشو 2018ء میں ہاکر پیسفک ایشیا نے ایمبریئر ایگزیکٹو جیٹس کے ہوائی جہازوں کے لیے اپنی سپورٹ کے 10 سال کا جشن ایک تقریب میں منایا جو ایمبریئر ایگزیکٹو جیٹس اور ہاک پیسفک کے سینئر رہنماؤں نے منعقد کی تھی۔

تصویر –  https://photos.prnasia.com/prnh/20180206/2048978-1
لوگو – https://photos.prnasia.com/prnh/20180131/2045517-1LOGO

سیلیتار ایروسپیس پرک میں ہاکر پیسفک سنگاپور سروس سینٹر 2007ء سے ایشیا بحر الکاہل خطے میں ایمبریئر ایگزیکٹو جیٹس کا منظور شدہ سروس سینٹر (اے ایس سی)  رہا ہے اور بنیادی و جامع دیکھ بھال، اور ایمبریئر ایگزیکٹو جیٹس کے ہوائی جہازوں – فینم 100، فینم 300، لیگیسی 500، لیگیسی 600، لیگیسی 650 اور لائن ایج 1000 – کی مکمل اقسام کے مالکان اور چلانے والوں کو اےاو جی سپورٹ فراہم کی۔

گزشتہ دہائی میں ہاکر پیسفک کی جانب سے مجموعی طور پر سو سے زیادہ ایمبریئر ایگزیکٹو جیٹس ہوائی جہازوں کو سپورٹ فراہم کی گئی۔

ہاکر پیسفک ایشیا کی سیلیتار تنصیب کی جانب سے ایمبریئر ایگزیکٹو جیٹس کے لیے سپورٹ کے کلیدی سنگ ہائے میل میں شامل ہیں:

  • لائن ایج 1000 پر 48 ماہ کی جانچ کرنے والا (2012ء)، 72 ماہ کی جانچ (2014ء اور 96 ماہ کی جانچ (2016ء) کرنے والا دنیا کا پہلا ادارہ؛
  • 2008ء میں ایفٹ لیویٹری اسموک ڈٹیکٹر لگانے کے لیے ایمبریئر لیگیسی 600 سروس بلیٹن پر ایمبریئر کے ساتھ تعاون؛
  • 2013ء میں جی پی ایس ری پلیسمنٹ، اریڈیئم، جی پی ایس انٹینا اور ایل آر یوز ری لوکیشن اور فلٹر انسٹالیشن کے لیے لیگیسی 650 سروس بلیٹن پر کمپلائس کی رہنمائی کے لیے شراکت داری، اور آفٹ، ونگ ٹینکس، فارورڈ اور وینٹرل ٹینک الیکٹریکل پمپس کے متبادل کے لئے ایک اور۔

ہاکر پیسفک ایشیا کی سیلیتار ایروسپیس پارک میں جامع، جدید ترین تنصیب فیڈرل ایوی ایشن ایڈمنسٹریشن (ایف اے اے) اور یورپین ایوی ایشن سیفٹی ایجنسی (ای اے ایس اے) کی منظور شدہ ہے۔ یہ عوامی جمہوریہ چین اور انڈونیشیا سمیت 13 دیگر ممالک کی قومی ہوابازی اتھارٹی کی منظوریاں رکھتی ہے۔

“ہاکر پیسفک تمام ایشیا ایمبریئر ایگزیکٹو جیٹس ہوائی جہازوں کے لیے علاقائی منظور شدہ سروس سینٹر بننے پر بہت فخر رکھتا ہے، مزید برآں یہ کہ اسے حال ہی میں ایمبریئر کی ای ایم بی 135/145 کمرشل جیٹ طیاروں کی فیملی کے لیے منظور شدہ سروس سینٹر کا اعزاز بھی مل چکا ہے۔ ایمبریئر ایگزیکٹو جیٹس کے مالکان اور چلانے والوں کا بھروسہ مند انتخاب ہونے کی حیثیت سے ہم بروقت، پروفیشنل سپورٹ فراہم کرتے ہیں بشمول ہمہ وقت اے او جی سپورٹ! ہم تزویراتی طور پر ایک ہمیشہ بڑھتی ہوئی ہوا بازی مارکیٹ میں قائم ہیں۔ یہ ہاکر پیسفک کے لیے اپنے صارفین کے قریب ہونا ممکن بناتی ہے۔ ہم ایمبریئر کا شکریہ ادا کرتے ہیں کہ وہ ہمیں خطے میں اپنا ایئرکرافٹ سپورٹ پارٹنر مقرر کر رہا ہے اور اس اعتماد کا بھی جو انہوں نے ہم پر ظاہر کیا۔ ہماری نظریں ایمبریئر جیسے انتہائی کامیاب اور دنیا بھر میں معتبر برانڈ کے ساتھ آگے کئی بہترین سال گزارنے پر لگی ہیں۔” جناب لوئس لیونگ، نائب صدر ایشیا، ہاکر پیسفک ایشیا نے کہا۔

ایمبریئر ایگزیکٹو جیٹس کے ساتھ ہاکر پیسفک ایشیا بڑے ہوا بازی برانڈز کو بھی سپورٹ کرتا ہے جن میں شامل ہیں:

  • ایمبریئر کمرشل ایوی ایشن کی ای آر جے 135/145 فیملی کے لیے منظور شدہ سروس سینٹر (اے ایس سی)
  • بیچ کرافٹ، ڈیزالٹ فیلکن جیٹ اور ڈاہر-سوکاٹا ہوائی جہاز کے لیے منظور شدہ سروس سینٹر (اے ایس سی)
  • اے سی ایس ایس، گارمن، ہنی ویل، روک ویل کولنز اور یونیورسل ایویونکس کی مصنوعات (منتخب مصنوعا) کے لیے منظور شدہ ڈیلر اور انسٹالر۔
  • ہنی ویل، رولس رائس، پریٹ اینڈ وٹنی انجنز (منتخب مصنوعات) کے لیے منظور شدہ لائن سروس سینٹر۔

ہدایات برائے مدیر:

1977ء سے خطے میں ہوا بازی کو مدد دینے والا ہاکر پیسفک ایشیا سنگاپور کے سیلیتار ایروسپیس پارک میں واقع ہے اور 9400 مربع میٹر کی تنصیب رکھتا ہے جو دیکھ بھال، مرمت اور اوورہال، رویٹروفٹس، موڈیفکیشنز اور اپگریڈز، ہوائی جہازوں کی فروخت، انتظام، پرزہ جات کی تقسیم، ایک مخصوص پینٹ شاپ، مع ایف بی او اور ایئرکرافٹ ہینڈلنگ سروسز سمیت عالمی معیار کی خدمات پیش کرتی ہے۔

مزید معلومات کے لیے ملاحظہ کیجیے www.hawkerpacific.com۔

ذرائع ابلاغ کے سوالات اور ہائی ریزولیوشن تصاویر کے لیے، رابطہ کیجیے:

محترمہ جولیٹ سامراج

مارکیٹنگ اینڈ کسٹمر ایکسپیریئس مینیجر

ہاکر پیسفک ایشیا پرائیوٹ لمیٹڈ

موبائل: 8004 9116 65+
ای میل: juliet.samraj@hawkerpacific.com

تصویر –  https://photos.prnasia.com/prnh/20180206/2048978-1
لوگو –  https://photos.prnasia.com/prnh/20180131/2045517-1LOGO

 

 

فلائی ناس كى بین الاقوامی وسعت پاکستان تک

ریاض – 11 فروری

فلائى ناس نے 15 فروری 2018 سے سعودی عرب اور پاکستان کے درمیان نئی پروازوں کو شروع كرنےکا اعلان کیا ہے۔   سعودى عرب اور پاکستان کے درمیان علاقائی رابطوں کو بهتر بنانے كے سلسلے میں  فلائی ناس نے نئی منزلوں تک  پروازوں کے آغاز کر نے كا فيصله كيا ہے۔

(Logo: http://photos.prnewswire.com/prnh/20161004/414891LOGO )

ان پروازوں کے لئے جدید اور یکتا سہولیات سے مزین ایربس 320 اور بوینگ 767    طیارےاستعمال کئے جائیں گے۔ بکنگ کے لئے بکنگ ایجنٹ کے علاوہ سمارٹ فون اور فلائی ناس کی ویب سائٹ کی سہولت بھی دستیاب ہو گی –

فلائی ناس مندرجہ بالا پروازوں کے علاوہ  زائیرین حج و عمرہ کے لئے  بھی خصوصی کشش رکھتا ہے – فلائى ناس  کام یا حج اور عمرہ کے لئے سعودی عرب کے مسافروں کی خدمت کرتی ہے، اور یہ مسافروں کے لئے مزید سہولیات فراہم کرے گی تا کہ بہت آسانی سے سعودی عرب کے مختلف علاقوں تک پہنچ سكيں- مزید براں اندرون ملک (سعودى عرب) کے مختلف 17 شہروں تک فوری  رسائی کے لئے فلائی ناس کی مزيد پروازیں بهى دستیاب ہوں گی ۔

اپنے بین الاقوامی توسیعی منصوبے  کے سلسلہ میں فلائی ناس کے چیف ایگزیکیٹو آفیسر بندر المهنا ا پنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے فرماتے ہیں “ہم اپنے معزز مسافروں کی ضروریات   کے مطابق اپنے دائرہ کار کو بڑھاتے رہیں گے،حالیاً ہم ایشیا اور افریقہ میں نئی منزلوں کو پانے کے عمل سے گذر رہے ہیں-  2017 میں ہم  کانو ،  نائیجیریا تک رسائی حاصل کر چُکے ہیں  اور 2018 میں پاکستان ، انڈیا اور الجیریا کے مختلف شہروں تک پہنچیں  گے”

ہمارا عہد ہے که سال  2018 همارى بین الاقوامى وسعتوں اور  نئی منزلوں  کے حصول کا سال ثابت ہو گا،  ہم یہ بھی وعدہ کرتے ہیں کے فلائی ناس نے گذشتہ 10 سال میں جو معیارقائم کيا ہے اسے برقرار رکھا جائے گا۔

فلائی ناس مندرجہ ذیل پروازوں کا آغاز کر رہا ہے :

15 فروری 2018 سے  ریاض – لاہور اور  ریاض – اسلام آباد

15 فروری 2018 سے  دمام – لاہور

17 فروری 2018 سے  جدہ –لاہور

فلائى ناس کے بارے میں:

فلائى ناس ایک سعودی قومی ایئر لائن ہے، جس میں 30 ائربس A320 طیارے کے بیڑے كو دو كلاسوں کے ساتھ ڈیزائن کیا گیا ہے: بزنس کلاس اور اكانومى کلاس-  اور ہفتے ميں 1000 سے زيادہ پروازيں مملكت  کے اندر مختلف  17 شهروں اور 17 بين الاقوامی منزلوں تک  جاتى هيں ۔ 2007 ء میں فلائى ناس کے آغاز سے، فلائى ناس نے 32 کروڑ سے زائد مسافروں كى ریاض، جدہ، دمام اور ابہا کے اہم ہوائی اڈوں سے کامیابی سے خدمت کی ہے۔
فلائى ناس بہترین قیمتوں پر بہترین خدمات فراہم کرنے کى خواہاں ہے اور اس كى  سپر کسٹمر سروس کے نتیجے میں فلائى ناس نے مسلسل تين سالوں 2015، 2016 اور 2017 کے لئے مشرق وسطی میں بہترین کم قیمت ایئر لائن کا  ورلڈ ٹریول ایوارڈز كا اعزاز حاصل کیا ہے اور  2017  سکائى ٹریکس “Skytrax” کا ایوارڈ بھی حاصل کيا۔

مزید معلومات کے لئے،  فلائى ناس ویب سائٹ پر جائیں:

 www.flynas.com

ایپکس شپنگ نے سی آر آئی گروپ کی اینٹی-برائبری مینجمنٹ سرٹیفکیشن کے لیے عمل کاآغاز کردیا

اخلاقی اقدار پرکھڑا دبئی میں قائم لاجسٹکس ادارہ آئی ایس او 37001:2016 اے بی ایم ایس معیار پر درج ہوتا ہوا

لندن، 9 فروری 2018ء/پی آرنیوزوائر/– کارپوریٹ ریسرچ اینڈانوسٹی گیشنز پرائیوٹ لمیٹڈ (سی آر آئی گروپ) نےآج اعلان کیا ہے کہ دبئی، متحدہ عرب امارات میں قائم ایپکس شپنگ سروسز ایل ایل سی نے آئی ایس او 37001 اینٹی -برائبری مینجمنٹ سسٹم اسٹینڈرڈ سرٹیفکیشن حاصل کرنے کے لیے سی آر آئی سرٹیفکیشن سروسز سے معاہدہ کرلیا ہے۔https://prnewswire2-a.akamaihd.net/p/1893751/sp/189375100/thumbnail/entry_id/0_2as0f0d4/def_height/400/def_width/400/version/100012/type/1

https://mma.prnewswire.com/media/431851/Corporate_Research_and_Investigations_Logo.jpg

اپنے اسٹیک ہولڈرز کے لیے پیغام میں ایپکس شپنگ نے کہا ہےکہ سرٹیفکیشن ادارے کو “اپنے انسداد-رشوت ستانی اور انسداد-بدعنوانی پروگرام کے نفاذ” میں سہولت دے گی اور “میری ٹائم اینٹی-کرپشن نیٹ ورک (ایم اے سی این) میں ایپکس شپنگ سروسز ایل ایل سی کی متحرک انداز میں شرکت کے لیے اہلیت کے معیار کو بھی بہتر بنائے گی۔”

لندن میں قائم سی آر آئی گروپ دیانت میں مطلوبہ احتیاط، ملازمت میں پس منظر کی جانچ، تھرڈ پارٹی خطرے کے انتظام اور تکمیل اور دیگر پیشہ ورانہ تفتیشی تحقیقی خدمات پیش کرنے والا عالمی ادارہ ہے۔ 2016ء میں ادارے نے 3پی آر ایم-سرٹیفائیڈ اور 3پی آر ایم-کوالیفائیڈ سمیت پروگراموں میں سی آر آئی سرٹیفکیشن اور ماہرین کی تربیت فراہم کرنے کے لیے اپنا اینٹی-برائبری اینڈ اینٹی کرپشن سینٹر فار ایکسی لینس (ABAC®CoE) جاری کیا۔

ظفر انجم، گروپ چیف ایگزیکٹو آفیسر سی آر آئی گروپ نے کہا کہ “ہماری نظریں ایپکس شپنگ کے ساتھ کام کرنے پر مرکوز ہیں اور ہم آئی ایس او 37001:2016 کے ذریعے انہیں اپنےاہداف حاصل کرنے میں مدد دینے سے وابستہ ہیں، ایسے معیارات جو دنیا بھر میں  160 سے زیادہ ممالک میں تسلیم اور استعمال کیے جاتے ہیں۔

آئی ایس او 37001:2016 سرٹیفکیشن

حال ہی میں قائم کردہ آئی ایس او 37001 معیار انسداد رشوت ستانی کے انتظام کا نظام لاگو کرنے میں مدد دینے کے لیے تیار کیا گیا ہے جو عالمی اداروں کو مختلف اقدامات کے سلسلے کی صراحت فراہم کرتا ہے جو کسی ادارے کو رشوت ستانی سے تحفظ، سراغ اور نمٹنے کے لیے درکار ہوتے ہیں ۔

سی آرآئی سرٹیفکیشن کے آڈیٹرز اور تجزیہ کاروں نے ایسے اقدامات تیار کیے جو موجودہ انتظامی عمل اور ضابطوں میں شامل ہوتے ہیں، بشمول ایک انسداد-رشوت ستانی پالیسی، جن میں تکمیل احکامات کی تربیت، تمام عملے کو پالیسی اور پروگرام کی اطلاع ، خطرے کا جائزہ فراہم کرنے، مطلوبہ احتیاط کا اہتمام، داخلی ضابطوں کا نفاذ اور اطلاع دینے اور تفتیش کرنے کے عمل کی تیاری فراہم کرنا شامل ہے۔

ایک بیان میں ایپکس شپنگ کے مالکان نے کہا کہ “سی آر آئی گروپ کارپوریٹ سچائی کے شعبے میں صف اول کا ادارہ ہے اوران کی سرٹیفکیشن ایپکس شپنگ کو کاروباری اخلاقیات کی راہ میں مہر تصدیق فراہم کرتی ہے۔”

سی آر آئی گروپ کے بارے میں

گزشتہ 28 سالوں میں سی آر آئی گروپ ادارہ جاتی تفتیش اور خطرات سے نمٹنے میں ایک عالمی رہنما کی حیثیت سے ابھراہے، جو چھ براعظموں میں نامور صارفین کے لیے خدمات فراہم کر رہا  ہے۔ سی آر آئی گروپ قانونی تکمیل، مالیاتی نتیجہ خیزی اور بیرونی شراکت داروں، رسد کنندگان اور کسی انجمن سے منسلک ہونے کے خواہشمند صارفین کے لیے تکمیل کی سطحیں قائم کرکے کاروباروں کو تحفظ دیتا ہے۔

رابطہ سی آر آئی گروپ:
انیل سوناگر
مارکیٹنگ مینیجر
کارپوریٹ ریسرچ اینڈ انوسٹی گیشنز پرائیوٹ لمیٹڈ
917-918، لبرٹی ہاؤس، ڈی آئی ایف سی، دبئی، متحدہ عرب امارات
ٹیلی فون: 3589884 4 971+| ٹیلی فون: 521042433 971+
www.CRICertification.com

لوگو – https://mma.prnewswire.com/media/431851/Corporate_Research_and_Investigations_Logo.jpg

فیچر: چین کا ہائنان دنیا بھر کے سیاحوں کو دعوت دیتا ہے اپنے ساحلوں سے کہیں آگے

بیجنگ، چین، 4 فروری 2018ء/سنہوا-ایشیانیٹ/– روس سے تعلق رکھنے والی یانا ژوراولیوا چین کے جنوبی کنارے پر واقع جزیرے ہائنان میں رہنے کی اتنی عادی ہو گئی ہیں کہ وہ ساتھ رہنے کے لیے اپنی والدہ اور نانی کو بھی لانے کے منصوبے بنا رہی ہیں۔

ژوراولیوا کا کہنا ہے کہ “یہاں زندگی آرام دہ ہے۔ ماحول اچھا ہے اور کام کے کئی مواقع ہیں۔”

پہلی بار 2005ء میں ہائنان آنے والی ژوراولیوا ایک ٹریول ایجنسی میں کام کرتی ہیں۔ طبی علاج کے لیے ہائنان آنے والے روسی سیاحوں کی تعداد میں اضافے کی بدولت ژوراولیوا نے دو سال قبل ایک چینی طبی ہسپتال میں کام کرنے کے لیے اپنی ملازمت تبدیل کی، جس نے گزشتہ سال لگ بھگ 1,000 روسی طبی سیاحوں کو خدمات پیش کی تھیں۔

ژوراولیوا نے کہا کہ ان کا سب سے بڑا خواب ہے کہ وہ اتنے پیسے کمالیں کہ ہائنان کے ساحلی تفریحی شہر سانیا میں ایک چھوٹا سا گھر خرید سکیں۔

ژوراولیوا جیسے کئی غیر ملکی ہائنان آ چکے ہیں اور اس منطقہ حارہ کے جزیرے سے محبت میں گرفتار ہو چکے ہیں، محض گرم موسم، دھوپ اور ساحلوں کا لطف اٹھانے کے لیے ہی نہیں، بلکہ اپنے خوابوں کی تعبیر کے لیے بھی۔

عالمی معیار کا سیاحتی مقام

ہائنان عالمی معیار کا سیاحتی مقام بننے  کی اپنی منزل کی جانب زبردست پیشرفت کر رہا ہے۔ اس نے 2020ء میں 1.3 ملین سے زیادہ غیر ملکی سیاحوں کی آمد کا ہدف مقرر کر رکھا ہے۔

“روسی سیاح جزیرے پر آنا پسند کرتے ہیں، صرف اس لیے نہیں کہ یہ نسبتاً قریب ہے، بلکہ مکمل سفری تجربے کا لطف اٹھانے کے لیے بھی کہ جس میں تفریح، ثقافتی سرگرمیاں اور طبی دیکھ بھال تک شامل ہیں۔” آندرے دینی سوف، روسی سفیر برائے چین نے کہا۔

ہائنان سفری پیکیجز کی وسیع اقسام پیش کرتا ہے جن میں سیر سپاٹے، ساحل، مقامی رسوم و رواج، منطقہ حارہ کے برساتی جنگلات، کھیل اور صحت کی دیکھ بھال شامل ہیں۔

دینی سوف کے مطابق 280,000 سے زیادہ روسی سیاح گزشتہ سال ہائنان گئے، جو ایک سال قبل پچھلے سال کے مقابلے میں دو گنا اضافہ تھا۔

انہوں نے کہا کہ ” ہائنان کے لیے تمام غیر ملکی سیاحوں کی تعداد میں روسی سیاحوں کی تعداد کو 50 فیصد تک پہنچاتے ہوئےہمیں سیاحتی تعاون مزید مضبوط ہونے کی امید ہے۔”

درحقیقت، 2017ء میں ہائنان میں غیر ملکی سیاحوں کی تعداد 1.1 تک بڑھی، جو مقامی حکام کے اعداد و شمار کے مطابق سال بہ سال میں تقریباً 50 فیصد اضافہ ہے۔

رواں سال جزیرے کو ایک درجہ اول کا مقام بنانے کے لیے تین سالہ منصوبہ شروع کیا جائے گا، جس کی ترجیحی پالیسیاں ہیں ویزا-فری سروسز، ٹکٹ پروموشنز اور سروس اپگریڈز وغیرہ۔

بڑی تبدیلیاں

چین کے لیے ناروے کے سفیر گیر او پیڈرسن، جنہوں نے 1988ء میں صوبے کا دورہ کیا تھا، کہا کہ “میری نظریں ہائنان میں واپسی پر لگی ہوئی ہیں کیونکہ میرے خیال میں وہاں کی تبدیلیاں باقی چین کی طرح ڈرامائی ہوں گی۔ میں صرف وہاں کی تصویریں دیکھ کر ہی یہ کہہ سکتا ہوں۔”

مقامی خصوصیات اور ہائنان میں  حالیہ ترقیوں کو ظاہر کرنے والے بڑے ڈسپلے پینل اور بوتھس بیجنگ میں جمعے کو ہونے والے ایک پروموشن ایونٹ کا حصہ تھے۔ایونٹ نے 500 سے زیادہ افراد کو اپنی جانب متوجہ کیا جن میں پیڈرسن اور 160 سے زیادہ ممالک کے دیگر غیر ملکی سفارت کار شامل تھے۔

ایک دوسرے کی خوبیوں کی بنیاد پر تعاون کی امید کا اظہار کرتے ہوئے پیڈرسن نے کہا کہ “یہ صرف اچھے ساحل، خوبصورت لوگ ہی نہیں بلکہ کئی دلچسپ ترقیات، کئی نئی عمارتیں، صنعتیں، بالخصوص ہائی ٹیک ترقی بھی ہے۔”

ہائنان کی ترقی صرف 30 سال پہلے شروع ہوئی، جب صوبے کو خصوصی اقتصادی زون بنایا گیا تھا۔

گورنر ہائنان صوبائی عوامی حکومت شین سیاؤمنگ نے کہا کہ “اس وقت ہائنان کمزور بنیادی ڈھانچے کے ساتھ نسبتاً پسماندہ علاقہ تھا، اور آپ کو کوئی ٹریفک لائٹ بھی نظر نہیں آسکتی تھی۔”

سابقہ زرعی جزیرہ جدت طرازی اور کشادگی کا راہنما بن چکا ہے۔ سمندری-زمینی-فضائی نقل و حمل کا ایک جال پہلے ہی صوبے کو باقی دنیا سے جوڑنے کے لیے تیار ہو چکا ہے، اور یہ جزیرہ ایشیا کے لیے بواؤ فورم کے سالانہ اجلاس کا گھر بھی ہے۔

شین نے کہا کہ “ہم دنیا   بھرکو اپنا دعوت نامہ بھیجنا  چاہتے ہیں۔ تعطیلات، سرمایہ کاری اور اپنی متنوع ثقافت کا تجربہ اٹھانے کے لیے ہائنان میں خوش آمدید۔”

ذریعہ: عوامی حکومت صوبہ ہائنان

پاکستان تیل و گیس ادارے کے پی او جی سی ایل کی سی آر آئی گروپ کی اینٹی-برائبری سرٹیفکیشن میں شمولیت

تلاش و پیداوار کے ابھرتے ہوئے صوبائی ادارے نے آئی ایس او 37001:2016 اے بی ایم ایس اسٹینڈرڈ کے لیے دستخظ کردیے

لندن، 5 فروری 2018ء/پی آرنیوزوائر/– کارپوریٹ ریسرچ اینڈ انویسٹی گیشنز پرائیوٹ لمیٹڈ (سی آر آئی گروپ) نے اعلان کیا ہے کہ پاکستان میں تیل و گیس کی پیداوار کا ادارہ کے پی او جی سی ایل آئی ایس او 37001 اینٹی-برائبری مینجمنٹ سسٹم اسٹینڈر سند حاصل کرنے کے لیے اس کی سی آر آئی سرٹیفکیشن سروسز میں شامل ہو چکا ہے۔https://prnewswire2-a.akamaihd.net/p/1893751/sp/189375100/thumbnail/entry_id/0_2as0f0d4/def_height/400/def_width/400/version/100012/type/1

https://mma.prnewswire.com/media/431851/Corporate_Research_and_Investigations_Logo.jpg

لندن میں قائم سی آر آئی گروپ دیانت میں مطلوبہ احتیاط، ملازمت میں پس منظر کی جانچ، تھرڈ پارٹی خطرے کے انتظام اور تکمیل اور دیگر پیشہ ورانہ تفتیشی تحقیقی خدمات پیش کرنے والا عالمی ادارہ ہے۔ 2016ء میں ادارے نے 3پی آر ایم-سرٹیفائیڈ اور 3پی آر ایم-کوالیفائیڈ سمیت پروگراموں میں سی آر آئی سرٹیفکیشن اور ماہرین کی تربیت فراہم کرنے کے لیے اپنا اینٹی-برائبری اینڈ اینٹی کرپشن سینٹر فار ایکسی لینس (ABAC®CoE) جاری کیا۔

کے پی او جی سی ایل خیبر پختونخوا پاکستان میں صوبائی ہولڈنگ کمپنی ہے جو 2013ء میں قائم کی گئی تھی تاکہ صوبے میں مقامی وسائل کی دریافت کرکے خیبر پختونخوا کو خود کفیل  بنائے۔ رضی الدین رضی، سی ای او کے پی او جی سی ایل، نے کہا کہ آئی ایس او 37001:2016 اے بی ایم ایس سرٹیفکیشن میں شمولیت ادارے کو “اپنے شراکت داروں اور حصص یافتگان کو مکمل اعتماد” فراہم کرنے میں مدد دے گی، دوسرے معنوں میں حکومت خیبر پختونخوا، پاکستان کو”۔

رضی نے کہا کہ کے پی او جی سی ایل “عوام کی سہولت اور اپنے حصص یافتگان کے لیے کارآمد خفیہ خزانوں کی مسلسل تلاش میں ہے۔ اس نے بین الاقوامی اور قومی اداروں کے لیے سرمایہ کاری کے نئے در وا کیے ہیں کیونکہ یہ ایک با اختیار اور راست گو ادارے کی حیثیت سے کاروباری برادری میں بہت اچھی ساکھ رکھتا ہے۔”

“کے پی او جی سی ایل کے بذریعہ کراچی اسٹاک ایکسچینج اور اے آئی ایم لندن اسٹاک ایکسچینج تک کے سفر کو آئی ایس او 37001 جیسے سنگ ہائے میل کی ضرورت ہوگی۔” رضی نے کہا۔ “سرمایہ کار اور کاروباری شراکت دار ہماری اہلیت اور فوقیت پر مکمل بھروسہ کر سکتے ہیں اور آئی ایس او 37001 ہماری ان خصوصیات کی تصدیق کرے گا۔”

آئی ایس او 37001:2016 سرٹیفکیشن

حال ہی میں قائم کردہ آئی ایس او 37001 معیار عالمی ادارے کو انسداد رشوت ستانی کے انتظام کا نظام لاگو کرنے میں مدد دینے کے لیے تیار کیا گیا ہے۔ یہ معیار مختلف اقدامات کے سلسلے کی صراحت کرتا ہے جو کسی ادارے کو رشوت ستانی سے تحفظ، سراغ اور نمٹنے کے لیے درکار ہوتے ہیں اور اس کے نفاذ کے لیے متعلقہ رہنمائی فراہم کرتا ہے۔

ظفر انجم، گروپ چیف ایگزیکٹو آفیسر سی آر آئی گروپ نے کہا کہ آئی ایس او 37001:2016 سرٹیفکیشن داخلی انسداد رشوت ستانی و انسداد بدعنوانی نظاموں کے قیام، نفاذ، برقرار رکھنے اور بہتر بنانے میں مدد کے لیے تیار کی گئی ہے۔

“ہماری نظریں کے پی او جی سی ایل کے ساتھ کام کرنے اور اسے اپنے اہداف کے حصول اور اخلاقی اداروں کی اعلیٰ ترین سطح پر تسلیم کیے جانے میں مدد دینے پر مرکوز ہیں۔” انجم نے کہا۔ “یہ بہت اہم ہے کہ آئی ایس او 37001:2016 معیارات دنیا بھر میں 160 سے زیادہ ممالک میں تسلیم اور استعمال کیے جاتے ہیں۔”

سی آر آئی سرٹیفکیشن کے پڑتال گر اور تجزیہ کار اقدامات اٹھاتے ہیں جو موجودہ انتظامی عمل اور اختیارات کے ساتھ مکمل ہوتے ہیں، اور ان میں شامل ہیں:

  • ایک انسداد رشوت ستانی پالیسی تسلیم کرنا
  • انتظامیہ کی جانب سے خریداری اور قیادت کا استحکام
  • تکمیل احکامات کی نگرانی کے ذمہ دار افراد کی تربیت
  • تمام اہلکاروں اور کاروباری ساتھیوں کو پالیسی اور پروگرام کی ترسیل
  • رشوت ستانی اور بدعنوانی کے خطرے کے تعین کی فراہمی
  • منصوبوں ، کاروباری ساتھیوں اور دیگر ملحقہ تیسرے فریقوں کو مطلوبہ احتیاط میں رہنمائی دینا
  • مالیاتی و تجارتی ضابطوں کا نفاذ
  • خبر گیری اور تفتیش کے عمل کی تیاری

“رشوت ستانی مقامی مارکیٹوں اور عالمی کاروباری سرگرمیوں دونوں میں ایک کلیدی مسئلہ ہے،” انجم نے کہا۔ “کاروباری عمل کو پھیلانے اور تجارتی فوائد کو زیادہ سے زیادہ کرنے کی خواہش کو نہ صرف کام کے دوران خطرات کو شناخت کرنے اور سنبھالنے کی بلکہ رشوت ستانی کے خطروں کا کھوج لگانے اور اسے کم کرنے کی بھی ضرورت ہوتی ہے۔ دنیا کی گورننگ اداروں کے بدعنوانی، رشوت ستانی وار دیگر غیر اخلاقی کاروباری حرکات سے تحفظ کے لیے زیادہ سخت معیارات اور کوششوں کی جانب جھکاؤ کے ساتھ ہم اداروں کو ان معیارات تک پہنچنے اور پورا اترنے میں مدد دینے کے لیے تیار ہیں۔”

سی آر آئی گروپ کے بارے میں

گزشتہ 28 سالوں میں سی آر آئی گروپ ادارہ جاتی تفتیش اور خطرات سے نمٹنے میں ایک عالمی رہنما کی حیثیت سے ابھرا، جو یورپ، ایشیا بحر الکاہل، جنوبی ایشیا، مشرق وسطیٰ، شمالی افریقہ، شمالی و جنوبی امریکا میں نامور صارفین کے لیے خدمات دے رہا ہے۔ سی آر آئی گروپ قانونی تکمیل، مالیاتی نتیجہ خیزی اور بیرونی شراکت داروں، رسد کنندگان اور کسی انجمن سے منسلک ہونے کے خواہشمند صارفین کے لیے تکمیل کے درجات  قائم کرکے کاروباروں کو تحفظ دیتا ہے۔

اینٹی-برائبری اینڈ اینٹی-کرپشن سینٹر آف ایکسی لینس سی آر آئی گروپ کے ایک آزاد شعبے کی حیثیت سے قائم کیا گیا تھا تاکہ انسداد بدعنوانی، مطلوبہ احتیاط کے عمل اور عالمی تیسرے فریق سے تعلق کی پیروی اور برقرار رکھنے کے لیے ضروری عوامل کے بہترین جدید اقدامات کو تعمیر کرکے تکمیل احکام کے موجودہ ڈھانچوں کی توثیق یا انہیں پھیلانے کے خواہشمند اداروں کو تربیت و استناد فراہم کر ے۔

رابطہ سی آر آئی گروپ

ظفر انجم، ایم ایس سی، ایم ایس، سی ایف ای، سی آئی آئي، ایم آئی سی اے، انٹرنیشنل ڈپلوما (فائنانشل کرائم)

گروپ چیف ایگزیکٹو آفیسر

کارپوریٹ ریسرچ اینڈ انوسٹی گیشنز ایل ایل سی

917-918، لبرٹی ہاؤس، ڈی آئی ایف سی

دبئی، متحدہ عرب امارات
دفتر: 3589884 4 971+
سیل: 9038184 50 971+
ای میل: zanjum@CRIGroup.com

لوگو –https://mma.prnewswire.com/media/431851/Corporate_Research_and_Investigations_Logo.jpg